بنیادی صفحہ / تازہ خبریں / نظام الدین مرکز اب مستقل طور پر کھلے گا،ہائی کورٹ نے کہا: مولانا سعد کو سونپیں چابی

نظام الدین مرکز اب مستقل طور پر کھلے گا،ہائی کورٹ نے کہا: مولانا سعد کو سونپیں چابی

Print Friendly, PDF & Email

نئی دہلی: دہلی پولیس نے پیر کو دہلی ہائی کورٹ سے کہا ہے کہ اسے جماعت کے رہنما مولانا سعد کو نظام الدین مرکز کی چابیاں سونپنے میں کوئی اعتراض نہیں ہے۔ دہلی پولیس کے وکیل نے دلیل دی ہے کہ اسے نظام الدین بنگلہ مسجد کا اصل مالک کون ہے اس سے متعلق دستاویزات فراہم نہیں کی گئی ہیں۔ پولیس نے کہا ہے کہ وہ صرف اسی شخص کو چابیاں دے سکتی ہے جس سے انہوں نے قبضہ لیا تھا اور وہ مولانا محمد سعد ہیں۔ جہاں پولیس نے عدالت میں دعویٰ کیا ہے کہ سعد فرار ہے، مرکز کی انتظامی کمیٹی کے ایک رکن نے دعویٰ کیا ہے کہ وہ مسجد کے احاطے میں موجود ہیں اور چابیاں لینے کے لیے ایجنسی کے سامنے پیش ہو سکتے ہیں۔

آپ چابیاں اپنے پاس نہیں رکھ سکتے: ہائی کورٹ

سماعت کے دوران جسٹس جسمیت سنگھ نے کہا، "پولیس نے کس شخص سے قبضہ لیا ہے؟ آپ اس شخص کو قبضہ واپس کر دیں۔ میں یہاں جائیداد کی ملکیت سے متعلق کسی معاملے کا فیصلہ کرنے کے لیے نہیں ہوں۔ آپ کو معلوم ہے کہ آپ کو کیا کرنا ہے لیکن چابیاں حوالے کر دیں۔ آپ اسے اپنے پاس نہیں رکھ سکتے۔” ہائی کورٹ دہلی وقف بورڈ کی طرف سے نظام الدین مرکز کو دوبارہ کھولنے کی ہدایت دینے کی درخواست پر سماعت کر رہی تھی۔
مرکز مارچ 2020 میں بند کر دیا گیا تھا۔
نظام الدین مرکز میں ایک مسجد، مدرسہ کاشف العلوم اور ایک ہاسٹل شامل ہے۔ جو کہ وبا کے آغاز کے بعد مارچ 2020 میں بند کر دیا گیا تھا۔ مئی میں، ہائی کورٹ نے ایک عبوری حکم جاری کرتے ہوئے مرکز کے ان حصوں کو دوبارہ کھولنے کی اجازت دی جو تبلیغی جماعت کے پروگرام کے بعد بند کر دیے گئے تھے۔ مرکزی حکومت نے اپنے حلف نامے میں کیمپس کو مکمل طور پر دوبارہ کھولنے کی مخالفت کی تھی۔ اس مہینے کے شروع میں، پولیس نے دہلی وقف بورڈ کو نظام الدین بنگلہ مسجد کی ملکیت سے متعلق دستاویزات پیش کرنے کی ہدایت دینے کے لیے ایک درخواست دائر کی تھی۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*