بنیادی صفحہ / قومی / فلپ کارٹ پر عائد ہوا 1 لاکھ روپے کا جرمانہ! آخرکیاہےوجہ؟

فلپ کارٹ پر عائد ہوا 1 لاکھ روپے کا جرمانہ! آخرکیاہےوجہ؟

Print Friendly, PDF & Email

سینٹرل کنزیومر پروٹیکشن اتھارٹی نے بدھ کے روز کہا کہ اس نے ای کامرس پلیئر فلپ کارٹ پر لازمی معیارات کی خلاف ورزی کرتے ہوئے اپنے پلیٹ فارم پر سینکڑوں غیر معیاری گھریلو پریشر ککرز کی فروخت کی اجازت دینے پر ایک لاکھ روپے کا جرمانہ عائد کیا ہے۔ سی سی پی اے کی چیف کمشنر ندھی کھرے  کی قیادت میں ایک پینل نے فلپ کارٹ کو ہدایت دی ہے کہ وہ اپنے پلیٹ فارم پر فروخت ہونے والے تمام 598 پریشر ککرز کے صارفین کو مطلع کرے۔ پریشر ککر واپس لے لیں اور صارفین کو اس کی قیمت واپس کردیں۔ یہی نہیں بلکہ 45 دنوں کے اندر اس کی تعمیل رپورٹ پیش کرے۔

سی سی پی اے نے بدھ 17 اگست کو ایک پریس ریلیز میں کہا کہ کمپنی کو اپنے ای کامرس پلیٹ فارم پر ایسے پریشر ککرز کی فروخت کی اجازت دینے اور صارفین کے حقوق کی خلاف ورزی کرنے پر 1,00,000 روپے کا جرمانہ ادا کرنے کی ہدایت دی ہے۔ رائٹس اتھارٹی نے نوٹ کیا کہ ’فلپ کارٹ کے استعمال کی شرائط‘ میں پروڈکٹ کے ہر انوائس پر ‘پاورڈ بائی فلپ کارٹ’ کے الفاظ کا لازمی استعمال اور مختلف فوائد کی تقسیم کے لیے فروخت کنندگان کو سونے، چاندی اور کانسی کے انعامات جیسی باتیں اس کردار کی نشاندہی کرتی ہیں۔ کمپنی اپنے ای کامرس پلیٹ فارم پر پریشر ککر اور دیگر مصنوعات فروخت کر رہی ہے۔

اتھارٹی نے کہا کہ فلپ کارٹ نے اعتراف کے طور پر اپنے ای کامرس پلیٹ فارم پر اس طرح کے پریشر ککرز کے فروخت کے ذریعے 1,84,263 روپے کی کل فیس حاصل کی۔ سی سی پی اے کے ذریعہ مشاہدہ کیا گیا کہ جب فلپ کارٹ نے اس طرح کے پریشر ککرز کی فروخت سے تجارتی طور پر فائدہ اٹھایا ہے، تو وہ صارفین کو ان کی فروخت سے پیدا ہونے والے نقصان سے خود کو الگ نہیں کر سکتا۔
ڈومیسٹک پریشر ککر (کوالٹی کنٹرول) آرڈر گزشتہ سال 1 فروری کو نافذ ہوا تھا۔ سینٹرل کنزیومر پروٹیکشن اتھارٹی کے قوانین کے مطابق تمام گھریلو پریشر ککرز کے لیے IS 2347:2017 کے مطابق ہونا لازمی قرار دیتا ہے۔ لہٰذا 1 ​​فروری 2021 سے، تمام پریشر ککرز کو IS 2347:2017 کے مطابق ہونا ضروری ہے اور پوری احتیاط کی ضرورت ہے چاہے پریشر ککر آن لائن یا آف لائن فروخت کے لیے پیش کیے جائیں۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*