بنیادی صفحہ / بھٹکل و اطراف / اب سے کم عمر بچوں کے گاڑیاں چلانے پر پولس کی سخت نگرانی۔ پکڑے جانے پر سرپرستوں پر ہوگی قانونی کارروائی:بھٹکل میں تنظیم اور فیڈریشن کی طرف سے مشترکہ کانفرنس

اب سے کم عمر بچوں کے گاڑیاں چلانے پر پولس کی سخت نگرانی۔ پکڑے جانے پر سرپرستوں پر ہوگی قانونی کارروائی:بھٹکل میں تنظیم اور فیڈریشن کی طرف سے مشترکہ کانفرنس

Print Friendly, PDF & Email

بھٹکل: 10 ستمبر،2021 (بھٹکلیس نیوز بیورو) "کرناٹک میں آئے دن سڑک حادثات ہورہے ہیں جن کا ایک اہم سبب تیزرفتاری سے گاڑیاں چلانا بھی ہے۔ بھٹکل میں عام طور پر کم عمر بچوں کے ہاتھوں میں گاڑیاں دی جاتی ہیں جس پر قابو پانا از حد ضروری ہے۔” ان خیالات کا اظہار مجلس اصلاح و تنظیم کے جنرل سکریٹری جناب عبدالرقیب ایم جے ندوی نے کیا۔  وہ آج بعد مغرب یہاں مجلس اصلاح و تنظیم اور بھٹکل مسلم یوتھ فیڈریشن کے زیر اہتمام منعقد مشترکہ اخباری کانفرنس میں اخباری نمائندوں سے مخاطب تھے۔

انہوں نے عوام سے درخواست کی کہ گاڑی چلانے کے لیے حکومت کے جو قوانین ہیں ان سب کا پاس و لحاظ رکھتے ہوئے گاڑیاں چلائیں۔

موصوف نے اس موقع پرایک  بہت ہی اہم مسئلہ کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ بھٹکل میں عام طور 18 سال سے کم عمر بچوں کے ہاتھوں میں گاڑیاں دی جاتی ہیں،  یہ بچے ٹرافک اصولوں کے بارے میں کچھ بھی نہیں جانتے ہیں اور پھر اس پر تیز چلا کر حادثات کا سبب بنتے ہیں جس سے وہ خود بھی اس کا شکار بنتے ہیں اور سامنے والے کو بھی بے جا مصیبت میں ڈالنے کا سبب بنتے ہیں۔

جنرل سکریٹری نے اس موقع پر اس کو اپنے اور سامنے والے کے لیے خطرہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ سرپرست کم عمر بچوں کو کسی طرح سے گاڑیاں چلانے کی اجازت نہ دیں۔

اس موقع پر بھٹکل مسلم یوتھ فیڈریشن کے صدر مولانا عزیز الرحمٰن رکن الدین  ندوی نے کہا کہ کم عمر بچوں کو گاڑیاں دینے سے جو اموات ہورہی ہیں وہ دینی ناحیہ سے بھی صحیح نہیں ہے، کیوں کہ ایک قتل کرنا اور اس کی وجہ بننا گویا قرآن کی روشنی میں پوری انسانیت کا قتل کرنا اور اس کا گناہ اپنے سر لینا ہے۔

اس سلسلے میں انہوں نےایک مہم کرنے کی بھی جانکاری دی جس میں اسپورٹس سینٹر کے نوجوانوں کے ذریعے محلہ وار سرپرستوں سے ملاقاتیں کرتے ہوئے انہیں بچوں کو گاڑیاں نہ دینے پر آمادہ کرنے کی کوشش کی جائے گی۔

اس کے ساتھ ہی انہوں نے یہ بھی کہا کہ پولس محکمہ بھی بھٹکل میں سی سی ٹی وی کے ذریعے اس پر نگرانی رکھے ہوئے ہیں جس میں پکڑے جانے پر ان کے والدین کو جرمانہ سمیت تین سال کی جیل بھی ہوسکتی ہے۔

صدر فیڈریشن نے اس موقع پر سرپرستوں سے اپنے بچوں کے آن لائن گیم پر بھی نگرانی رکھنے کی درخواست کی اور اس پر روپیوں کے خرچ ہونے پر نگاہ رکھنے کی اپیل کی۔

واضح رہے کہ ٹرافک اصول کے مطابق کم عمر بچوں کے گاڑیاں چلاتے ہوئے پکڑے جانے پر سرپرستوں کو تین سال تک کی جیل اور 25 ہزار کا جرمانہ لگتا ہے۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*