بنیادی صفحہ / عالمی / کرائسٹ چرچ حملہ: عوام کی اسلحہ واپسی کا سلسلہ شروع، وزیر اعظم جیسنڈا کا منصوبہ کامیاب

کرائسٹ چرچ حملہ: عوام کی اسلحہ واپسی کا سلسلہ شروع، وزیر اعظم جیسنڈا کا منصوبہ کامیاب

Print Friendly, PDF & Email

نیوزی لینڈ میں عوام کی طرف سے آتشیں اسلحہ حکومت کو جمع کرانے کے منصوبے کے پہلے مرحلے کو انتہائی کامیاب قرار دیا گیا ہے۔ ہتھیار جمع کرانے کا یہ سلسلہ ہفتہ 13 جولائی سے شروع ہوا ہے۔ رواں برس مارچ میں کرائسٹ چرچ شہر کی دو مساجد پر حملوں کے بعد ‘گن کلچر‘ کے خاتمے کی خاطر خاتون وزیراعظم جیسنڈا آرڈرن نے یہ منصوبہ پیش کیا تھا۔

وزیراعظم نے گن کلچر کے خاتمے کے لیے قانون سازی بھی کی۔ اسی سال اپریل میں نیوزی لینڈ کی پارلیمنٹ نے گن ریفارمز بل کی منظوری دی تھی۔ کرائسٹ چرچ کی مساجد پر حملے میں اکاون نمازیوں کی موت ہوئی تھی اور ان حملوں نے ملکی سماجیات پر گہرے اثرات مرتب کیے ہیں۔

رواں برس کے دوران اس طرح کے 258 ایونٹس منعقد کیے جائیں گے، جن میں عوام اپنا اسلحہ حکومت کو ‘فروخت‘ کر دے گی۔ پولس کے محکمے کے ملکی وزیر اسٹورٹ ناش کا کہنا ہے کہ اسلحہ جمع کرانے کا بنیادی مقصد مختلف طبقوں کو خطرناک ہتھیاروں سے صاف کرنا ہے۔

 علاقائی پولس کے کمانڈر مائیک جونسن کے مطابق کینٹربری کے شہر میں نو سو تین ہتھیار رکھنے والوں نے اپنے ایک ہزار چار سو پندرہ ہتھیار جمع کرنے کے لیے رجسٹریشن کرائی ہے۔ جونسن کے مطابق گن کلچر کے خاتمے میں عوام کی بھرپور شرکت ایک حوصلہ افزا اقدام ہے اور یہ قابل ستائش ہے۔

مائیک جونسن نے مزید کہا کہ نیوزی لینڈ کی پولس کو یقین ہے کہ اس حکومتی پروگرام کے تحت ملک میں قانون کی پاسداری کرنے والے شہریوں کے پاس موجود آتشیں اسلحے کو واپس لینا ایک اہم کام ہے۔ جونسن نے لوگوں کے مثبت ردعمل کو مثبت عوامی رویہ قرار دیا ہے۔ عام لوگوں کا بھی کہنا ہے کہ انہیں واقعتاً نیم فوجی یا فوجی ہتھیار رکھنے کی ضرورت نہیں ہے۔

x

Check Also

وزیر اعظم مودی کی ملیشیا کے وزیر اعظم مہاتیر محمد سے ملاقات، ذاکر نائک کی حوالگی کا اٹھایا معاملہ

ولادیووستک۔ روس میں ایسٹ اکنامک فورم کے موقع پر اپنی مصروفیات کو ...