بنیادی صفحہ / عالمی / اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں ہندوستان سمیت 3 دیگرممالک کومستقل ارکان بنانےفرانس نےاٹھائی آواز

اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں ہندوستان سمیت 3 دیگرممالک کومستقل ارکان بنانےفرانس نےاٹھائی آواز

Print Friendly, PDF & Email

فرانس نے اقوام متحدہ کی توسیع شدہ سلامتی کونسل میں مستقل ارکان کے طور پر ہندوستان، جرمنی، برازیل اور جاپان کے لیے اپنی حمایت کا اعادہ کیا ہے۔ فرانس نے طاقتور دنیا میں مستقل موجودگی کی ذمہ داری سنبھالنے پر بھی زور دیا ہے، اس نے طاقت کے توازن پر بھی زور دیا ہے۔ اقوام متحدہ میں فرانس کی نائب مستقل نمائندہ نتھلی براڈہرسٹ نے کہا کہ فرانس کی پوزیشن مستقل اور معروف ہے۔ ہم چاہتے ہیں کہ کونسل آج کی دنیا کی زیادہ نمائندہ بنے، اس طرح کہ اس کے اختیار اور تاثیر کو مزید تقویت ملے۔

براڈہرسٹ نے کہا کہ اپنی ایگزیکٹو اور آپریشنل نوعیت کو برقرار رکھنے کے لیے ایک توسیع شدہ کونسل میں 25 ممبران ہو سکتے ہیں۔ فرانس جرمنی، برازیل، ہندوستان اور جاپان کی بطور مستقل رکن امیدواری کی حمایت کرتا ہے۔ ہم مستقل ارکان سمیت افریقی ممالک کی مضبوط موجودگی بھی دیکھنا چاہتے ہیں۔ باقی نشستیں مساوی جغرافیائی نمائندگی حاصل کرنے کے لیے مختص کی جانی چاہئیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ ویٹو کا سوال انتہائی حساس ہے اور یہ ممالک پر منحصر ہے کہ وہ اپنا تعین کرنے کے لیے مستقل نشست دینے کی درخواست کریں۔ اس بنا پر مقصد دوگنا رہنا چاہیے: ایک طرف سلامتی کونسل کی قانونی حیثیت کو مستحکم کرنا اور دوسری طرف بین الاقوامی امن اور سلامتی کو برقرار رکھنے ہوگا۔

براڈہرسٹ سلامتی کونسل کی رکنیت میں مساوی نمائندگی کے سوال اور سلامتی کونسل سے متعلق دیگر امور پر اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے مکمل اجلاس سے خطاب کر رہی تھیں۔ براڈہرسٹ نے کہا کہ ہمیں ایسی نئی طاقتوں کے ظہور کو مدنظر رکھنا چاہیے جو سلامتی کونسل میں مستقل موجودگی کی ذمہ داری قبول کرے۔
اسی جذبے کے تحت فرانس نے 2013 کے اوائل میں تجویز پیش کی تھی کہ کونسل کے پانچ مستقل ارکان نے رضاکارانہ اور اجتماعی طور پر اجتماعی مظالم کی صورت میں ویٹو کے استعمال کو معطل کر دیا ہے۔ اس رضاکارانہ طریقہ کار کے لیے چارٹر پر نظر ثانی کی ضرورت نہیں ہے بلکہ مستقل اراکین کی جانب سے سیاسی عزم کی ضرورت ہے۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*