بنیادی صفحہ / صوبائی / مسجد میں چھپائے جاتے ہیں اسلحے، غدارِ وطن کو سکھائیں گے سبق: بی جے پی رکن اسمبلی

مسجد میں چھپائے جاتے ہیں اسلحے، غدارِ وطن کو سکھائیں گے سبق: بی جے پی رکن اسمبلی

Print Friendly, PDF & Email

شہریت ترمیمی قانون (سی اے اے)، قومی شہریت رجسٹر (این آر سی) اور قومی آبادی رجسٹر (این پی آر) کے خلاف ملک بھر میں احتجاجی مظاہرہ جاری ہیں۔ ان مظاہروں سے بی جے پی کافی پریشان ہے اور پارٹی لیڈران لگاتار متنازعہ بیانات بھی دے رہے ہیں۔ تازہ بیان کرناٹک کے دیو ناگرے ضلع سے بی جے پی رکن اسمبلی ایم پی رینوکاچاریہ نے دیا ہے۔ شہریت ترمیمی قانون کی حمایت میں طلب کی گئی ایک میٹنگ میں بی جے پی رکن اسمبلی نے کہا کہ ’’کچھ غدارِ وطن ہیں جو مسجد میں بیٹھے ہیں اور فتویٰ جاری کر رہے ہیں۔‘‘

رینوکاچاریہ نے میٹنگ کے دوران مسلمانوں کے خلاف زبردست طریقے سے زہر افشانی کی۔ انھوں نے یہاں تک کہہ دیا کہ ’’مسجد میں اسلحے اکٹھے کیے جاتے ہیں اور ہم ان غدارِ وطن افراد کو سبق سکھانے کا کام کریں گے۔‘‘ رینوکاچاریہ کے ان بیانات پر مبنی ایک رپورٹ ’ٹائمز ناؤ‘ میں شائع ہوئی ہے جس میں ان کے حوالے سے لکھا گیا ہے کہ ’’اگر انھیں (مسلمانوں) پاکستان، بنگلہ دیش، افغانستان سے چندہ مل رہا ہے تو وہیں سے لینے دیجیے۔‘‘

 غور طلب ہے کہ بی جے پی کے کئی لیڈران شہریت ترمیمی قانون اور این آر سی کو لے کر متنازعہ بیان دے رہے ہیں۔ اس سے پہلے مغربی بنگال میں بی جے پی رکن پارلیمنٹ سومترا خان نے کہا تھا کہ ’’شہریت ترمیمی قانون اور این آر سی کی مخالفت کرنے والے دانشور لوگ ترنمول کانگریس کے کتے ہیں۔‘‘ اسی طرح 18 جنوری کو بنگال بی جے پی کے صدر دلیپ گھوش نے متنازعہ بیان دیتے ہوئے کہا تھا کہ ’’جو دانشور شہریت ترمیمی قانون کے خلاف مظاہرہ کر رہے ہیں وہ شیطان اور کیڑے ہیں۔‘‘
x

Check Also

نایاب پہل: 200 سے زائد غیر مسلموں نے بنگلور کی 170 سال پرانی مسجد کا کیا دورہ

ویسے تو کسی بھی مذہب اور جنس سے تعلق رکھنے والے شخص ...