بنیادی صفحہ / قومی / رام مندر، سی اے اے، این آر سی اور کشمیر پر سپریم کورٹ نے اٹھایا ’غلط قدم‘: سابق چیف جسٹس

رام مندر، سی اے اے، این آر سی اور کشمیر پر سپریم کورٹ نے اٹھایا ’غلط قدم‘: سابق چیف جسٹس

Print Friendly, PDF & Email

رام مندر تعمیر، شہریت ترمیمی قانون، این آر سی اور کشمیر سے دفعہ 370 ہٹائے جانے کا معاملہ لگاتار تنازعہ میں ہے۔ بی جے پی حکومت کے ذریعہ اٹھائے گئے ان اقدام اور پھر ان کے خلاف داخل عرضی پر سپریم کورٹ کے رویہ پر کئی لوگوں نے سوال بھی اٹھائے۔ اب دہلی ہائی کورٹ کے سابق چیف جسٹس اور لاء کمیشن کے سابق صدر جسٹس اجیت پرکاش شاہ نے سپریم کورٹ کے ذریعہ سنائے گئے کچھ تازہ فیصلوں پر اپنا رد عمل ظاہر کیا ہے۔ انھوں نے کہا کہ عدالت عظمیٰ اکثریتی طبقہ سے جڑے لوگوں کے جذبات پر قابو کر حکومت کے نظریہ سے عدم اطمینان ظاہر کرنے میں ناکام رہی۔ انھوں نے واضح لفظوں میں کہا کہ ’’شہریت ترمیمی قانون، جموں و کشمیر سے دفعہ 370 ہٹانے، رام مندر، این آر سی سمیت کئی ایشوز ایسے ہیں جن پر سپریم کورٹ نے انصاف پر مبنی قدم نہیں اٹھائے ہیں۔‘‘

 دراصل جسٹس شاہ مجاہد آزادی اور گاندھی وادی شخصیت ایل سی جین کی یاد میں منعقد ایک جلسہ سے خطاب کر رہے تھے۔ اس موقع پر انھوں نے کہا کہ سپریم کورٹ نے کئی معاملوں کی سماعت سے متعلق ترجیحات طے کرنے میں بھی غلطیاں کی ہیں۔ انھوں نے کہا کہ ’’کئی مواقع پر ایسا محسوس ہوا کہ عدالت کے پاس مفاد عامہ، شہری حقوق سے متعلق مقدموں کی سماعت کے لیے وقت نہیں ہے۔ اس میں تاخیر کی گئی۔‘‘ جسٹس اے پی شاہ نے جموں و کشمیر میں دفعہ 370 ہٹائے جانے کے بعد کی حالت سے جڑی عرضیوں پر سماعت میں تاخیر کیے جانے پر خصوصی طور پر سوال اٹھایا۔

x

Check Also

شاہین باغ احتجاج کاروں نے رکھے 7 مطالبات، مسلسل چوتھے روز بھی بات چیت کا نہیں نکلا کوئی نتیجہ

نئی دہلی۔ شاہین باغ میں سی اے اے، این آر سی اور این پی ...