بنیادی صفحہ / قومی / ایودھیا تنازعہ: ہندومہاسبھا نے مسلم فریق کو پانچ ایکڑ زمین دیئے جانے پر دائرکی نظرثانی کی عرضی

ایودھیا تنازعہ: ہندومہاسبھا نے مسلم فریق کو پانچ ایکڑ زمین دیئے جانے پر دائرکی نظرثانی کی عرضی

Print Friendly, PDF & Email

نئی دہلی: اجودھیا تنازعہ میں ہندو فریق کی جانب سے اکھل بھارتیہ ہندو مہاسبھا نے پیر کو سپریم کورٹ میں نظر ثانی کی عرضی دائر کی۔ مہاسبھا کی جانب سے وکیل وشنو شنکر جین نے یہ عرضی دائر کی۔ عرضی میں سنی وقف بورڈ کو پانچ ایکڑ زمین دینےکے سپریم کورٹ کے 9 نومبرکے فیصلےکی مخالفت کی گئی ہے۔ عرضی گزارنے سپریم کورٹ سے بابری مسجد کومنہدم کرنےکوغیرقانونی بتانے والے تبصرے کوہٹانےکا بھی مطالبہ کیا ہے۔

واضح رہے کہ اس سے قبل مسلم فریق کی جانب نظرثانی کی عرضی (ریویوپٹیشن) داخل کی جاچکی ہے۔ مسلم فریق کا کہنا ہے کہ جس بنیاد پرفیصلہ دیا گیا ہے اس سے وہ متفق نہیں ہیں، لہٰذا ثبوتوں کے بنیاد پرفیصلہ ہونا چاہئے۔ بہرحال اب دیکھنا یہ ہوگا کہ مسلم فریق اور ہندو مہا سبھا کی عرضیوں پر سپریم کورٹ کا کیا فیصلہ آتا ہے۔

 

x

Check Also

‘من کی بات’ میں وزیر اعظم مودی نے لاک ڈاﺅن کے لئے عوام سے مانگی معافی ، ساتھ ہی دی یہ صلاح

 وزیر اعظم نریندر مودی (PM Narendra Modi) نے کوروناوائرس کے انفیکشن کو ...