بنیادی صفحہ / قومی / بہار اور آسام میں سیلاب کا خوفناک منظر، اب تک 26 لوگوں کی موت

بہار اور آسام میں سیلاب کا خوفناک منظر، اب تک 26 لوگوں کی موت

Print Friendly, PDF & Email

بہار اور آسام میں بارش اور سیلاب سے ہنگامہ برپا ہے۔ بارش اور سیلاب ے قہر سے دونوں ریاستوں میں اب تک 26 لوگوں کی جان جا چکی ہے۔ دونوں ریاستوں کے کئی اضلاع کے حالات بد سے بدتر ہو چکے ہیں۔ خبروں کے مطابق بہار میں سیلاب سے اب تک 19 لوگوں کی موت ہو چکی ہے۔ آسام میں بھی کم و بیش 7 لوگ اس سیلاب کی نذر ہو چکے ہیں۔

سیلاب کی وجہ سے صرف ارریہ میں ہی 9 لوگوں کی موت ہو چکی ہے جب کہ موتیہاری میں سیلاب سے مرنے والوں کی تعداد اب تک 10 پہنچ گئی ہے۔ این ڈی آر ایف کی ٹیمیں راحت اور بچاؤ کے کام میں لگاتار مصروف ہیں۔ سیلاب کی وجہ سے 7 ٹرینوں کو رَد کر دیا گیا ہے۔

 بہار کے جن علاقوں میں سیلاب کا سب سے زیادہ اثر ہے ان میں ارریہ، کشن گنج، سپول، دربھنگہ، شیوہر، سیتامڑھی، مشرقی چمپارن، مدھوبنی ضلع شامل ہیں۔ بہار کے ڈیزاسٹر مینجمنٹ محکمہ کے مطابق ندیوں کی آبی سطح بڑھنے سے چمپارن، مدھوبنی، شیوہر، سیتامڑھی، ارریہ اور کشن گنج میں معمولات زندگی بری طرح متاثر ہے۔

 مظفر پور ضلع میں باگ متی ندی کی آبی سطح مستحکم رہنے کے باوجود کٹرا اور اورائی میں سیلاب کی صورت حال خطرناک بنی ہوئی ہے۔ مشرقی چمپارن کے نئے علاقوں میں پانی تیزی سے داخل ہو رہا ہے۔ مدھوبنی میں کملا بلان اور دھوس ندی کا پشتہ ٹوٹنے سے ضلع کی حالت کافی خراب ہو گئی ہے۔ دربھنگہ میں چار مقامات پر کملا ندی کا پشتہ ٹوٹ گیا ہے۔

آسام میں 33 میں سے 25 اضلاع میں سیلاب کی وجہ سے تقریباً 15 لاکھ لوگ بری طرح متاثر ہوئے ہیں۔ ریاست میں سیلاب کی زد میں آ کر مرنے والوں کی تعداد بڑھ کر 7 ہو گئی ہے۔ ریاستی ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی (اے ایس ڈی ایم اے) کے مطابق متاثرہ اضلاع میں دھیماجی، لکھیم پور، بسوناتھ، نلباڑی، چرانگ، گولہ گھاٹ، ماجولی، جور ہاٹ، ڈبرو گڑھ، نگاؤں، کوکراجھار، بونگائی گاؤں، بکسا، سونت پور، درانگ اور بارپیٹا شامل ہیں۔ بارپیٹا میں حالت سب سے زیادہ سنگین ہے۔

x

Check Also

سابق مرکزی وزیرارون جیٹلی نہیں رہے، 66 سال کی عمرمیں ایمس میں آج لی آخری سانس

سابق وزیرمالیات اوربی جے پی کے سینئر لیڈرارون جیٹلی کا آج ہفتہ  ...