بنیادی صفحہ / قومی / این آئی اے چھاپہ کے بعد باندا کے رکن اسمبلی نے لگایا اس مدرسہ پر سنگین الزام

این آئی اے چھاپہ کے بعد باندا کے رکن اسمبلی نے لگایا اس مدرسہ پر سنگین الزام

Print Friendly, PDF & Email

باندا۔ باندا ممبر اسمبلی برجیش پرجاپتی نے باندا کے جامعہ عربیہ مدرسہ کو دہشت گردانہ سرگرمیوں میں ملوث ہونا بتایا ہے۔ انہوں نے کہا کہ این آئی اے کے چھاپہ سے یہ بات ثابت ہوتی ہے۔ انہوں نے مدرسہ پر غیر ملکی فنڈنگ کو دہشت گردانہ سرگرمیوں میں استعمال کرنے کا بھی الزام لگایا ہے۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ اس طرح کے مدرسوں اور اداروں پر فوری طور پر پابندی عائد کی جائے۔

بتا دیں کہ این آئی اے کی ٹیم نے مقامی پولیس کی مدد سے جمعرات کو باندا کے هتھورا گاؤں کے جامعہ عربیہ مدرسے میں چھاپہ مارا۔ بتایا جا رہا ہے کہ گزشتہ دنوں کشمیر میں پکڑے گئے مشتبہ کے پاس سے ملی ڈائری میں ملے نام اور فون نمبرز کی بنیاد پر این آئی اے ٹیم نے چھاپہ ماری کی کارروائی کی۔ تاہم، تحقیقات کے دوران ٹیم کو کچھ خاص ہاتھ نہیں لگا ہے۔ اس موقع پر این آئی اے ٹیم نے کشمیری طلباء سے پوچھ گچھ کی۔

ممبر اسمبلی نے کہا کہ حیدرآباد بم دھماکے میں ملزم لشکر طیبہ کا دہشت گرد نعیم، جسے نومبر 2017 میں لکھنؤ سے گرفتار کیا گیا تھا، وہ باندا کے ہتھورا گاؤں کے جامعہ عربیہ مدرسہ میں ٹھہرا تھا۔ انہوں نے کہا کہ این آئی اے جانچ ایجنسی کے مطابق وہ توصیف عرف عاشق سے ملا تھا۔

انہوں نے کہا کہ توصیف اسی مدرسے میں ٹریننگ لیتا رہا ہے۔ اسے کشمیر میں پکڑا گیا تھا۔ جب اس کے دہشت گرد ساتھی فہیم کو این آئی اے ٹیم گرفتار کرنے آئی اور یہاں تین بار چھاپہ ڈالا لیکن اسے مدرسہ سے اٹھا نہیں پائی۔ برجیش پرجاپتی نے کہا کہ اس مدرسہ میں بیرون ملک سے فنڈنگ ہو رہی ہے۔ یہ پیسہ دہشت گردانہ سرگرمیوں میں لگایا جاتا ہے۔

x

Check Also

ارجت پٹیل آربی آئی گورنرکےعہدے سےمستعفی

ریزرو بینک آف انڈیا (آربی آئی) گورنرارجت پٹیل نے استعفیٰ دے دیا ...