بنیادی صفحہ / بھٹکل و اطراف / سرسی کو الگ ضلع بنانے کا مطالبہ لے کر آج سرسی میں ہوا احتجاج: سرسی میں مکمل بند

سرسی کو الگ ضلع بنانے کا مطالبہ لے کر آج سرسی میں ہوا احتجاج: سرسی میں مکمل بند

Print Friendly, PDF & Email

سرسی: 24 فروری، 2021 (بھٹکلیس نیوز بیورو) سرسی ضلع ہوراٹا سمیتی  کی جانب سے آج سرسی کو اتر کینرا سے الگ کرکے الگ ضلع کا درجہ دینے کامطالبہ کرتے ہوئے بند منایا گیا تھا جو کہ بہت ہی کامیاب رہا ۔

اس بند کو سرسی کے عوام کا مکمل تعاون حاصل رہا جس کے نتیجے میں سرسی میں آج اسکول اور دواخانوں کے علاوہ تمام دکانیں اور دفاتر بند دیکھے گئے۔

اس موقع پر مقررین نے کہا کہ سرسی کی ترقی کے لیے اس کا اتر کینرا سے الگ ہوکر الگ ضلع بننا ضروری ہے۔ اس موقع پر مقررین نے عوامی نمائندوں کی خاموشی کو لے کر بھی سوالات کھڑے کیے۔

واضح رہے کہ سرسی کے عوام گذشتہ دس بارہ سالوں سے سرسی کو الگ ضلع کا درجہ دینے کی مانگ کر رہے ہیں اور اس سلسلے میں عوامی تنظیموں کی جانب سے کئی مرتبہ میمورنڈم سونپا جاچکا ہے۔

سرسی کے عوام کا خیال ہے کہ اگر سرسی کو علاحدہ ضلع کا درجہ دیا جاتا ہے تو یہ بھی اڈپی کی طرح ترقی کرسکتا ہے۔ اس کے علاوہ یہاں کے عوام کو اپنے سرکاری دستاویزات کے حصولی کے لیے 150 کلو میٹر سفر کرکے کاروار آنا پڑتا ہے اور طلبہ کو بھی اتنی دور کا سفر طے کرکے روزانہ کاروار آنا پڑتا ہے۔ عوام کا کہنا تھا کہ  ان سب چیزوں کے حل اور سرسی کی ترقی کو ذہن میں رکھتے ہوئے حکومت کو اس پر سنجیدگی سے غور کرنا چاہئے۔ سمیتی کے ذمہ داران نے حکومت کو جلد از جلد اس پر غور کرنے کی اپیل کرتے ہوئے اپنے احتجاج کو آگے بھی جاری رکھنے کی یقین دہانی کی۔

ہوراٹا سمیتی کے صدر اُپیندرا پائی ، ایم ایم بھٹ، پرمانند ہیگڈے ، منجو  موگیر سمیت سابق سابق رکن اسمبلی وویکانند وئیدیا ، ضلع پنچایت ممبر جی این ہیگڈے مریگار موجود تھے۔

x

Check Also

لاک ڈاؤن کے دوران رابطہ کی زیر نگرانی عوام کی خدمت کرنے والوں کی بھٹکل مسلم خلیج کونسل کی طرف سے تہنیت

بھٹکل: 10 مارچ،2021 (بھٹکلیس نیوز بیورو) کورونا لاک ڈاؤن کے دوران بھٹکل ...