بنیادی صفحہ / بھٹکل و اطراف / مرڈیشور میں نصب شیوا کی مورتی کی بے عزتی کے الزام میں مرڈیشور میں احتجاج: آئی ایس آئی ایس کا پتلہ نذر آتش

مرڈیشور میں نصب شیوا کی مورتی کی بے عزتی کے الزام میں مرڈیشور میں احتجاج: آئی ایس آئی ایس کا پتلہ نذر آتش

Print Friendly, PDF & Email

بھٹکل: 24 نومبر، 2021 (بھٹکلیس نیوز بیورو) ریاست کے مشہور سیاحتی مقام مرڈیشور میں نصب شیوا کی مورتی کی ممنوعہ دہشت گرد تنظیم آئی ایس آئی ایس کی طرف سے بے عزتی اور ان سے خطرہ ہونے کا الزام لگاتے ہوئے آج مرڈیشور میں بی جے پی یوا مورچہ کی طرف سے احتجاج درج کیا گیا اور آئی ایس آئی ایس کے خطرے کو دیکھتے ہوئے بھٹکل ڈی وائی ایس پی کو میمورنڈم سونپا گیا جس میں یہاں پہلے سے ہی حفاظتی انتظامات کرنے کا مطالبہ کیا گیا ۔جبکہ احتجاجیوں نے دہشت گرد تنظیم آئی ایس آئی ایس کے خلاف نعرے بازی کرتے ہوئے اس کا پتلہ بھی نذر آتش کردیا۔
اطلاع کے مطابق آئی ایس آئی ایس کی طرف سے ایک پوسٹر شائع کیا گیا ہے جس میں مرڈیشور میں واقع شیوا مورتی کا اوپر کا حصہ نکال کر آئی ایس آئی ایس کا جھنڈا لگایا گیا ہے ساتھ ہی مورتی کو کئی جگہوں سے مسخ کرکے بگاڑنے کی بھی کوشش کی گئی ہے۔ صوت الہند (The Voice of Hind)نام کی میگزین میں شائع اس پوسٹر میں نیچے مورتی کو توڑنے کی بھی دھمکی دی گئی ہے۔جس پر ربیع الثانی 1443 بھی درج کیا گیا ہے۔
اس پوسٹر کے منظر عام پر آنے کے بعد سے لوگوں میں ناراضگی بڑھتی جارہی ہے اور لوگ انتظامیہ پر حفاظتی انتظامات سخت کرنے کے لیے دباؤ بنا رہے ہیں ۔
اس تعلق سے ضلع کی ایس پی سمن ڈی پیناکر نے میڈیا کو بتایا “فی الحال اس تعلق سے کوئی معلومات ہمیں نہیں ملی ہیں تاہم اس سلسلہ میں سائبر کرائم پولس کی مدد حاصل کر کے معلومات اکٹھی کی جارہی ہیں”۔انہوں نے بتایا کہ ریاستی وزیر داخلہ نے اس تعلق سے ہدایات دیتے ہوئے مرڈیشور میں حفاظتی انتظامات بڑھانے کو کہا ہے۔ جبکہ ضلعی انجارج وزیر شیورام ہیبار، ایم ایل سنیل نائک وغیرہ نے بھی اس معاملہ کی نزاکت کو سمجھتے ہوئے فوری کارروائی کرنے کی یقین دہانی کی ہے،


تاہم اس تعلق سے بعض مبصرین کا کہنا ہے کہ ملک میں کئی ریاستوں میں انتخابات کی تاریخ قریب ہوتے جارہی ہے اور اسی کو دیکھتے ہوئے پارٹیاں مختلف ہتھکنڈوں کا استعمال کرکے ووٹروں کو لبھانے کی کوشش میں ہیں اسی کو دیکھتے ہوئے سیاسی مبصرین کا کہنا ہے کہ شیوا کی مورتی کو مسخ کرنا بھی اسی داؤ بیچ کا ایک حصہ ہوسکتا ہے ۔ سیاسی ماہرین کا کہنا ہے کہ ملک میں ایسی پارٹیوں کی کمی نہیں ہے جو انتخابات کے قریب آتے ہیں لوگوں کی آستھا سے جڑا معاملہ اٹھاتے ہیں اور مذہب کے نام پر ایک دوسرے کو لڑا کر اپنا الو سید ھا کرتے ہیں۔
واضح رہے کہ بھٹکل سے دس کلو میٹر دور سیاحتی مقام مرڈیشور میں واقع شیوا کی یہ مورتی 123 فٹ اونچی ہے جسے ایشیا کی دوسری سب سے اونچی مورتی ہونے کا اعزاز حاصل ہے ۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*