بنیادی صفحہ / مضامین / نومبر 09 :  مشہور و معروف شاعر بیخودؔ بدایونی کی برسی ہے

نومبر 09 :  مشہور و معروف شاعر بیخودؔ بدایونی کی برسی ہے

Print Friendly, PDF & Email

از: ابوالحسن علی بھٹکلی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بیخودؔ بدایونی کا اصل نام محمد عبد الحئی صدیقی تھا۔ آپ 17 ستمبر 1857ء کو بدایوں کے ایک صوفی گھرانے میں پیدا ہوئے۔ اُس زمانے کے رواج کے مطابق بے خود نے پہلے عربی اور فارسی کی تعلیم حاصل کی۔ اس کے بعد آپ نے قانون کی تعلیم حاصل کی اور وکیل کی حیثیت سے مراد آباد اور شاہجہان پور میں کام کیا۔ پھر وکالت سے اکتا کر سرکاری نوکری سے وابستہ ہوئے اور سروہی (راجستھان) اور جودھپور میں خدمات انجام دیتے رہے۔

بے خود بدایونی انیسویں صدی کے آخر اور بیسویں صدی کی ابتداء کے ممتاز شعراء میں شامل ہیں۔ انہوں نے شاعری میں پہلے الطاف حسین حالی، پھر داغ دہلوی کی شاگردی اختیار کی۔ اپنی زندگی کا زیادہ حصہ جودھپور میں بسر کرنے کے باعث وہ اردو ادب کے مراکز دہلی اور لکھنؤ سے دور رہے، اور غالباً اسی وجہ سے انکی شاعری بہت عام نہ ہو سکی۔ طویل عرصے تک طبع نہ ہونے کی باعث انکے بہت سے اشعار کو مختلف شعراء نے اپنی تخلیق کے طور پر پیش کیا، اور ان کے بہت سے کلام کو بے خود دہلوی اور کچھ اور شعراء کے کلام سے بھی منسوب کیا گیا۔

بے خود بدایونی غزلیات، حمد و نعت اور رباعیات کے شاعر تھے۔ محبت، فلسفہ، تصوف اور اسلام انکی شاعری کا موضوع تھا۔ اُن کی چار کتب “ہوش و خرد کی دکان”، “صبر و شکیب کی لُوٹ”، “مرآۃ الخیال” اور “افسانۂ بے خود” کے نام سے شائع ہوئیں۔

10 نومبر 1912ء کو بے خود کا بدایوں میں انتقال ہوا اور وہیں آسودۂ خاک ہوئے۔

پردے سے پُچھتے ہو ترا دل کہاں ہے اب
پہلو میں میرے آؤ تو کہدوں یہاں ہے اب
…..
منتخب کلام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پیام لے کے جو پیغام بر روانہ ہوا
حسد کو حیلہ ملا اشک کو بہانہ ہوا

وہ میری آہ جو شرمندہء اثر نہ ہوئی
وہ میرا درد جو منت کش دوا نہ ہوا

خیال میں رہیں صورتیں عزیزوں کی
وطن سے چھوٹے ہوۓ اس قدر زمانہ ہوا

وہ داغ جس کو جگہ دل میں دی تھی جیتے جی
چراغ بھی تو ہمارے مزار کا نہ ہوا

پری وشوں کو سناتے ہیں قصہ خواں بیخودؔ
ہمارا حال نہ ٹھہرا کوئی فسانہ ہوا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جس میں سودا نہیں وہ سر ہی نہیں
درد جس میں نہیں جگر ہی نہیں

لوگ کہتے ہیں وہ بھی ہیں بے چین
کچھ یہ بے تابیاں ادھر ہی نہیں

دل کہاں کا جو درد دل ہی نہ ہو
سر کہاں کا جو درد سر ہی نہیں

بے خبر جن کی یاد میں ہیں ہم
خیر سے ان کو کچھ خبر ہی نہیں

بیخودؔ محو و شکوہ ہاۓ عتاب
اس منش کا تو وہ بشر ہی نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حشر پر وعدہء دیدار ہے کس کا تیرا
لاکھ انکار اک اقرار کس کا تیرا

نہ دوا سے اسے مطلب نہ شفا سے سروکار
ایسے آرام میں بیمار ہے کس کا تیرا

لاکھ پردے میں نہاں شکل ہے کس کی تیری
جلوہ ہر شے سے نمودار ہے کس کا تیرا

اور پامال ستم کون ہے تو ہے بیخودؔ
اس ستم گر سے سروکار ہے کس کا تیرا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رقیبوں کا مجھ سے گلا ہو رہا ہے
یہ کیا کر رہے ہو یہ کیا ہو رہا ہے

دعا کو نہیں راہ ملتی فلک کی
کچھ ایسا ہجوم بلا ہو رہا ہے

وہ جو کر رہے ہیں بجا کر رہے ہیں
یہ جو ہو رہا ہے بجا ہو رہا ہے

وہ نا آشنا بے وفا میری ضد سے
زمانے کا اب آشنا ہو رہا ہے

چھپاۓ ہوۓ دل کو پھرتے ہیں بیخودؔ
کہ خواہاں کوئی دل ربا ہو رہا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نالے میں کبھی اثر نہ آیا
اس نخؒ میں کچھ ثمر نہ آیا

اللہ ری میری بے قراری
چین ان کو بھی رات بھر نہ آیا

کہتا ہوں کہ آ ہی جاۓ گا صبر
یہ فکر بھی ہے اگر نہ آیا

غفلت کے پڑے ہوۓ تھے پردے
وہ پاس رہا نظر نہ آیا

آنکھوں سے ہوا جو کوئی اوجھل
بیخودؔ مجھے کچھ نظر نہ آیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کبھی حیا انہیں آئی کبھی غرور آیا
ہمارے کام میں سو سو طرح فتور آیا

ہزار شکر وہ عاشق تو جانتے ہیں مجھے
جو کہتے ہیں کہ ترا دل کہیں ضرور آیا

جو با حواس تھا دیکھا اسی نے جلوہء یار
جسے سرور نہ آیا اسے سرور آیا

خدا وہ دن دکھاۓ کہ میں کہوں بیخودؔ
جناب داغؔ سے ملنے میں رام پور آیا

x

Check Also

سچی باتیں ۔۔۔ دشمنی کا سدِّ بابدشمنی کا سدِّباب۔۔۔ تحریر : مولانا عبد الماجد دریابادی مرحوم

قرآن مجید کے چھبیسویں  پارہ میں  ایک سورہ حجرات ہے اس میں  ...