بنیادی صفحہ / مضامین / نومبر 11 :  کو ممتاز شاعر ، ادیب اور نقاد فارغؔ بخاری کا یومِ پیدائش ہے 

نومبر 11 :  کو ممتاز شاعر ، ادیب اور نقاد فارغؔ بخاری کا یومِ پیدائش ہے 

Print Friendly, PDF & Email

از: ابوالحسن علی بھٹکلی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
11 نومبر 1917ء اردو کے ممتاز شاعر، ادیب اور نقاد فارغؔ بخاری کی تاریخ پیدائش ہے۔
فارغؔ بخاری کا اصل نام سید میر احمد شاہ تھا اور وہ پشاور میں پیدا ہوئے تھے۔ابتدا ہی سے ادب کے ترقی پسند تحریک سے وابستہ رہے اور اس سلسلے میں انہوں نے قید و بند کی صعوبتیں بھی برداشت کی انہوں نے رضا ہمدانی کے ہمراہ پشتو زبان و ادب اور ثقافت کے فروغ کے لئے بیش بہا کام کیا۔ ان کی مشترکہ تصانیف میں ادبیات سرحد، پشتو لوک گیت، سرحد کے لوک گیت، پشتو شاعری اور پشتو نثر شامل ہیں۔ ان کے شعری مجموعوں میں زیرو بم، شیشے کے پیراہن، خوشبو کا سفر، پیاسے ہاتھ، آئینے صدائوں کے اور غزلیہ کے نام سرفہرست تھے۔ ان کی نثری کتب میں شخصی خاکوں کے دو مجموعے البم، مشرقی پاکستان کا رپورتاژ، برات عاشقاں اور خان عبدالغفار خان کی سوانح عمری باچا خان شامل ہیں۔
فارغ بخاری کا انتقال 13 اپریل 1997ء کو پشاورمیں ہوا اور وہ پشاور ہی میں آسودۂ خاک ہوئے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
منتخب کلام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمیں سلیقہ نہ آیا جہاں میں جینے کا
کبھی کیا نہ کوئی کام بھی قرینے کا

تمھارے ساتھ ہی اس کو بھی ڈوب جانا ہے
یہ جانتا ہے مسافر ترے سفینے کا

کچھ اس کا ساتھ نبھانا محال تھا یوں بھی
ہمارا اپنا تھا انداز ایک جینے کا

سخاوتوں نے گہر ساز کر دیا ہے انہیں
کوئی صدف نہیں محتاج آبگینے کا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قدم قدم پہ وہاں قربتیں تھیں اور یہاں
ہجوم شہر سے تنہا گزر رہا ہوں میں

پکارا جب مجھے تنہائی نے تو یاد آیا
کہ اپنے ساتھ بہت مختصر رہا ہوں میں

یہ کیسی رفعتیں آئینہء نگاہ میں ہیں
کسی ستارے پہ جیسے اتر رہا ہوں میں

میں روشنی ہی کی وحدانیت کا قائل ہوں
محبتوں ہی کا پیغام بر رہا ہوں میں

میں شب پرست نہیں ہوں یہی خطا ہے مری
ادا شناس جمال سحر رہا ہوں میں

یہاں بس ایک نیا تجربہ ہوا فارغؔ
کہ لمحے لمحے کو محسوس کر رہا ہوں میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی منظر بھی سہانا نہیں رہنے دیتے
آنکھ میں رنگ تماشا نہیں رہنے دیتے

چہچہاتے ہوۓ پنچھی کو اڑا دیتے ہیں
کسی سر میں کوئی سودا نہیں رہنے دیتے

روشنی کا کوئی پرچم جو اٹھا کر نکلے
اس طرح دار کو زندہ نہیں رہنے دیتے

کیا زمانہ ہے یہ کیا لوگ ہیں کیا دنیا ہے
جیسا چاہے کوئی ویسا نہیں رہنے دیتے

کیا کہیں دیدہ ورو ہم تو وہ دریا دل ہیں
کبھی ساحل کو بھی پیاسا نہیں رہنے دیتے

رہزنوں کا وہی منشور ہے اب بھی فارغؔ
سر کشیدہ کوئی جادہ نہیں رہنے دیتے

x

Check Also

سچی باتیں ۔۔۔ تصویر اعمال ۔۔۔ تحریر : مولانا عبد الماجد دریابادی

        وَوَجَدُوْامَاعَمِلُوْا حَاضِرًا- کھف         لوگوں  نے جو کچھ عمل کئے ہیں  ...